100+ Best Barish Shayari In Urdu/Hindi

100+ Best Barish Shayari In Urdu/Hindi


Best Barish Shayari in Urdu–Rain Poetry : People relate Rain to their emotions. It's considered a symbol of affection and it’s own importance in people life everything that relates to rain.

People take support of Rain to unexpectedly express their feelings and selecting proper word to explain their sentiments. Rain is named Barish in Urdu language

Pakistani people are enthusiastic on Rain/Barish. Barish shayari is for dreamy and responsive people who love rain. They also like to read and write Barish PoetryMany of us like reading Barish Urdu Poetry of varied famous poets. Rain/Barish Poetry, Shayari, and Ghazals are supported sadness or romance intended for sensitive people that have extreme love for rain.

Rain is usually relate to such emotion like heart-broken and romance, it become tears that's invisible for masses and becomes best way of express love. We have collected best poetry on baarish of popular poets in this section.



 

Best Barish Shayari In Urdu/Hindi

 

برسات کے آتے ہی توبہ نہ رہی باقی،

بادل جو نظر آئے بدلی میری نیت بھی۔

 

Barsaat Ke Aate Hi Toba Na Rahi Apni

Baadil Jo Nazar Aaye Badli Meri Niyyat Bhi.

 

کیوں برس برس کر رُلا رہی ہو

اوروں کے تو تم جسم بِھگا ر ہی ہو۔

 

Q Baras Baras Kr Rula Rahi Ho،

Auron K Tu Tum Jism Ko Bhiga Rahi Ho

 

کیوں مانگ رہے ہو کسی بارش کی دعا

تم اپنے شکستہ در و دیوار تو دیکھو

 

Qiyon Maang Rahe Ho Ksi Baarish Ki Dua,

Tum Apnay Shikistah Dar-O-Deewar To Dekho,

 

اک تم اور اک بارش دونوں کمال کرتے ہو

آتے ہو آگ لگانے بجھانا بھول جاتے ہو

 

Ek Tum Aur Ek Baarish Dono Kamal Krte Hen,

Aate Ho Aag Lagane Bhujana Bhool Jaate Ho,

 

کس منہ سے الزام لگائے بارش کی بوندوں پر

ہم نے خود تصویر بنائی تھی مٹی کی دیواروں پر

 

Kis Munh Se Elzaam Lagaye Baarish Ki Boodhon Per,

Hum Ne Khud Tasveer Banaai Thi Matti Ki Deewaaron Per,

 

جو منہ آ رہی تھی اب لپٹی ہے پاوں سے

بارش کے بعد مٹی کی فطرت ہی بدل گئی

 

Jo Munh Aa Rahi Thi Ab Lipti He Paaon Se,

Baarish Ke Baad Matti Ki Fitrat Hi Badal Gaye,

 

قطرہ قطرہ گری مگر پھر بھی

زخم گہرے لگا گئی بارش

 

Qatra Qatra Giri Magr Phir Bhi,

Zakham Gehre Laga Gye Baarish,

 

تم جو ہوتے تو بات اور تھی

اب کے بارش تو صرف پانی ہے

 

Tum Jo Hote To Aur Baat Hoti,

Ab Ke Baarish To Sirf Paani He,


 

Barish Sad Shayari Status In Urdu/Hindi

 

اے بارش تجھے کس نے رولا دیا آج۔۔۔

برستی ہی جا رہی ہے میرے شہر پر۔۔۔

 

Ay Baarish Tujhe Kis Ne Rula Diya Aaj…

Barasti Hi Ja Rahi Hemere Shehr Per…

 

سوچو تو کیا لمحہ ہو گا۔

اوربارش میں ،تم چھتری

 

Socho To Kiya Lmha Hoga,

Men Tum Chattri Aur Baarish,

 

منظر بے نور تھا فضائیں بے رنگ

تمہارا خیال ہی آیا موسم سہانا ہو گیا

 

Manzar Be-Noor Tha Fizaaiyen Be-Rang,

Tumhara Khiyaal Hi Aya Mosam Sohana Ho Gya,

 

بارش ختم ہو جائے تو

چھتری بوجھ لگنے لگتی ہے

 

Baarish Khatam Ho Jaye To…

Chattri Bojh Lagnay Lagti He,

 

بارشوں میں پتنگیں اڑایا کرو

زندگی کیا ہے خود ہی سمجھ جاؤ گے

 

Baarish Me Pattengen Uddaya Kare,

Zindagi Kiya He Khud Hi Samjh Jao Ge,

 

دعا ہے بارش کے جتنے قطرے گریں

اتنی ہی آپ کو خوشیاں ملیں

 

Dua He Baaish Ke Jitne Qatrey Giren,

Itni Hi Aap Ko Khushiyan Milen,

 

بھیگی مٹی کی مہک پیاس بڑھا دیتی ہے

درد برسات کی بوندوں میں بسا کرتی ہے

 

Bheegi Matti Ki Mehak Piyaas Barha Deti He,

Dard Barsaat Ki Boodon Me Basa Karti He,

 

موسم کو بھی میری خبر ہو شاید

میری طرح وہ بھی آج ٹوٹ کے برسا

 

Mosam Ko Bhi Meri Khabar Ho Shayed

Meri Tarah Who Bhi Aaj Toot Ke Barsa,

 

ان بارشوں کا برسنا بے سبب نہیں ۔

رویا ہو گا کوئی بادل پھر محبت کی طرح ۔

 

In Baarishon Ka Barsna Be-Sabab Nahi

Roya Hoga Koi Baadil Phir Mohabbat Ki Tarah,

 

آج موسم کا غرور تو دیکھو

جیسے میرے یار کا دیدار کر کے آیا ہو

 

Aaj Mosam Ka Ghroor To Dekho,

Jese Mere Yaar Ka Deedar Kr Ke Aya Ho,

 

پتا ہے مجھے با رش کیو ں پسند ہے

یہ برستی ہے اداس لو گو ں کی طر ح۔

 

Pata He Mujhe Baarish Qiyon Pasand He,

Ye Barasti He Udaas Logon Ki Tarah,

 

اُداس رہتا ہے آج کل محلے میں با رش کا پا نی

سُنا ہے بڑ ے ہو گئے ہیں کا غذ کی کشتی بنا نے والے۔

 

Udaas Rehta He Aaj Kal Mohalle Me Baarish Ka Pani,

Suna He Barre Ho Gye Hen Kaagiz Ki Kashti Bnane Wale

 

سزا یہ ہے کہ بنجر زمین ہوں

اب ظلم یہ ہے کہ با ر شوں سے عشق کیا ۔

 

Saza Ye He Ke Banjer Zameen Hon,

Ab Zulam Ye He Ke Baarishon Se Eshq Kiya,


 

 

اب کیا فا ئدہ ان با رشوں کے برسنے کا

وہ شخص ہی نہیں پا س جو لگاتا تھا گلے بجلیوں کے ڈر سے۔

 

Ab Kiya Faaida In Baarishon Ke Barasne Ka,

Who Shaks Hi Nahi Paas Jo Galay Lagata Tha Bijlion Ke Darr Se,

 

با رش میں ایسی بات کہا ں کہ ہمیں جُدا کردے

تُو مجھ میں شامل ہے میری رو ح بن کر۔

 

Baarish Me Aesi Baat Kahan Ke Hame Juda Kr De,

Too Mujh Me Shaamil He Meri Rooh Ban Ker,

 

اس نے تو کہا تھا کہ ہم با رش میں ساتھ ساتھ بھیگیں گے

تو پھر آ ج کیوں وہ تنہا ،میں تنہا اور یہ با رش تنہا۔

 

Us Ne To Kaha Tha Ke Hum Baarish Me Sath Sath Bheegen Ge,

To Phir Aaj Qiyon Wo Tanha, Men Tanha, Aur Ye Barish Tanah.

 

تیرے بغیر اس مو سم میں اب مزہ کہاں

اب کا نٹوں کی طرح چُبھتی ہیں دل میں بارش کی بو ندیں۔

 

Tere Beghair Is Mosam Me Ab Maza Kahan,

Ab Kaanton Ki Tarah Chubbti Hen Dil Me Baarish Ki Boonden

 

کیا خاک مزہ آئے گا جب یار ہی نہیں پہلو میں

آگ لگے اس موسم کو کوئی نام نہ لے اب بارش کا

 

Kiya Khaak Maza Ayega Jab Yaar Hi Nahi Pehloo Me

Aag Lage Is Mosam Ko, Koi Naam Na Le Ab Baarish Ka

 

ساتھ بارش میں لیے پھرتے ہو اس کو محسن،

تم نے اس شہر میں کیا آگ لگانی ہے کوئی

 

Sath Barish Me Liye Phirte Ho Usk Mohsin,

Tum Ne Is Shehr Me Aag Lagani He Koi.

 

میں وہ صحرا جسے پانی کی ہوس لے ڈوبی

تو وہ بادل جو کبھی ٹوٹ کے برسا ہی نہیں

 

Men Who Sehra Jis Ko Paani Ki Havas Le Doobi,

Tu Who Baadil Jo Kabhi Toot Ke Barsa Hi Nahi.

 

برسات میں بھی یاد نہ جب اُن کو ہم آئے

پھر کون سے موسم سے کوئی آس لگائے

 

Barsaat Me Bhi Yaad Na Jab Un Ko Hum Aaye,

Phir Konsay Mosam Se Koi Aas Lagaye…

 

رنگ برسات نے بھرے کچھ تو

زخم دل کے ہوئے ہرے کچھ تو

 

Rangg Barsaat Ne Bharre Kush To,

Zakham Dil Ke Houy Harre Kush To.

 

ہمیں کیا معلوم تھا کہ

یہ موسم یوں رو پڑے گا

 

Hame Kiya Maloom Tha Ke,

Ye Mosam Youn Ro Parega…

 

اے بارش برس برس اور برس

أج تو اس کی يادوں کو بہا لے جا

 

Aye Baarish Baras, Baras, Aur Baras,

Aaj To Uski Yaadon Ko Baha Le Ja…

 

ہجر کا تارا ڈُوب چلا ہے ڈھلنے لگی ہے رات وصی

قطرہ قطرہ برس رہی ہے اُشکوں کی برسات وصی

 

Hijar Ka Taara Doob Chla Ha Dhalnay Lagi He Raat Wasi,

Qatra Qatra Baras Rahi He Ashkon Ki Barsaat Wasi…

 

سحرا کی طرح خشک تھیں آنکھیں

بارش کہیں دل میں ہو رہی تھی۔

 

Sehra Ki Tarah Thi Khushk Aankhen,

Barish Kahin Dil Mein Ho Rahi Thi

 

برس سکے تو برس جائے اس گھڑی ورنہ

بکھیر ڈالے گی  بادل کے سارے خواب ہوا۔

 

Bars Sake To Bars Jaye Is Gharri Warna,

Bkhair Dale Gi Badal Ke Saray Khawab Hawa,

 

یاد آے وہ پہلی بارش ،

جب تجھے ایک نظر دیکھا تھا۔

 

Yaad Aayi Woh Pehli Barish

Jab Tujhe Aik Nazar Dekha Tha,

 

تم ہوتے توبات اور تھی،

اب کی بارش تو صرف پانی ہے۔

 

Tum Jo Hote Toh Baat Aur Thi,

Ab Ki Barish Toh Sirf Pani Hai,

 

تم جو نہیں اس بارش میں،

پھر آگ لگے اس موسم کو۔

 

Tum Jo Nahi Is Baarish Me,

Phir Aag Lage Iss Mausam Ko.

 

غم کی بارش نے تیرے نقش کو دھویا نہیں ،

تو نے مجھکو کھو دیا ، میں نے تجھ کو کھویا نہیں۔

 

Gham Ki Barish Ne Tere Naqsh Ko Dhoya Nahi,

Tu Ne Muje Kho Dia Main Ne Tuje Khoya Nahi.

 

دور تک چھائے تھے بادل اور کہیں سایہ نہیں تھا۔

اس طرح برسات کا موسم کبھی آیا نہین تھا۔۔

 

Dor Tak Chaye Thay Badal Aur Kahen Saya Na Tha,

Is Tarah Barsat Ka Mosam Kabhi Aya Na Tha…

 

کئی روگ دے گئی نئے موسموں کی بارش۔

مجھے یاد آرہی ہیں مجھے بھول  جانے والے۔

 

Kye Rog De Gayi Hai Naye Mosmon Ki Barish,

Muje Yaad A Rahe Hain Muje Bhol Jane Wale.

 

یہ حُسنِ موسم ، یہ بارش ، یہ ہوائیں۔

لگتا ہے محبت نے آج کسی کا ساتھ دیا ہے۔

 

Ye Husn-E Mosam, Ye Barish, Ye Hawain,

Lagta Hai Mohabat Ne Aaj Kisi Ka Sath Dya Hai.

 

تیز بارش میں کھڑا ہوں  وہ اک جملہ سننے کو۔

ارے ادھر آؤ، بھیگ جاو گے۔

 

Tez Barish Mai Khara Hon Wo Ik Jumla,Sun’ne Ko،

Are Idhar Aao…Bheg Jao Gaay,

 

جو بارش کی تمنا ہے تو ان آنکھوں میں آ بیٹھو۔

وہ برسوں میں کہیں برسیں، یہ برسوں سے برستی ہیں۔

 

Jo Barish Ki Tamana Hai Tu In Ankhon Main Aa Betho,

Wo Barson Main Kehain Barsain Ye Barson Se Barasti Hai.

 

December Cool & Romantic Shayari

 

دسمبر آؤ کہ میں نے تمہاری خاطر

یہ پورا سال گِن گِن کر گذارا ہے۔

 

December Aao Keh Mne Tumhari Khatir,

Ye Poora Saal Gin Gin Keh Guzara He.

 

دسمبر کی پہلی بارش اور وقت رخصت

دسمبر نے بھی جاتے جاتے کیا انمول تحفہ دیا ہے۔

 

December Ki Pehli Baarish Aur Waqat-E-Rukhsat,

December Ne Bhi Jate Jate Kiya Anmol Tohfa Diya He.

 

فراقِ یار کی بارش، ملال کا موسم.

ہمارے شہر میں اترا کمال کا موسم۔

 

Firaaq-E-Yaar Ki Baarish, Mulaal Ka Mosam.

Hamare Shehr Me Utra Kamaal Ka Mosam.

 

پھولوں پہ تھا سکتہ تاری اور خوشبو سہمی سہمی تھی

خوف زدہ تھا گلشن سارا اور دہشت گرد دسمبر تھا۔

 

Phoolon Pe Tha Sakta Taari Aur Khushboo Sehmi Sehmi Thi,

Khauf Zadda Ka Gulshan Sara Aur Dehshat Gard December Tha.

 

کیا گزرتی ہے کیا بتائیں چلو اُسکو دکھاتے ہیں

دسمبر کو دسمبر میں دسمبر سے ملاتے ہیں۔

 

Kiya Guzarti He Kiya Batayen Chalo Usko Dikhate Hen.

December Ko December Me December Se Milaate Hen.

 

سنو، تم کو برسوں تک رلائے گا

میرے بغیر جب بھی دسمبر آئے گا۔

 

Suno, Tum Ko Barson Tak Rulaye Ga

Mere Begher Jab Bhi December Aaye Ga.

 

 

رات چپکے سے دسمبر نے یہ سرگوشی کی۔

پھر سے اک بار رلا دوں تجھے جاتے جاتے۔

 

Raat Chupke Se December Ne Yeh Sargoshi Ki,

Phir Se Ik Bar Rulaa Doon Tujhe Jatey Jatey.

 

 

اے دسمبر کچھ تو ہوش کر، یہ تجھے کیا ہوا۔

بن برسے گزر جانا تیری عادت پہلے تو نہ تھی۔

 

Aye December Kuch To Hosh Kar, Yeh Tujhe Kiya Hua,

Bin Barse Guzar Jana Teri Aadat Pehle To Na Thi.

 

 

بہت برستا تھا نا یہ دسمبر بھی۔

لگتا ہے اب اسے بھی پیارہو گیا۔

 

Boht Barasta Tha Na Ye December Bhi,

Lagta Hai Ab Isey Bhi Piyar Ho Gaya.

 

 

ٹھٹھرتی ہوئی شبِ سیاہ، اور وہ بھی طویل تر۔

محسن، یہ حجر کے ماروں پہ قیامت ہے دسمبر

 

Thithharti Huyi Shab-E-Seyah, Aur Woh Bhi Taweel-Tar,

Mohsin, Yeh Hijar Ke Maaron Pe Qayamat Hai Decembe.

 

 

 

 

یاد دلاتا ہے سرد موسم،

کسی کے لہجے کا سرد ہونا۔

 

Yaad Dilaata Hai Sardd Mausam,

Kisi Ke Lehjeyy Ka Sardd Hona.

 

 

تیری یادیں دسمبر کی شبوں کے جیسے۔

جو آتی ہیں تو جانا بھول جاتی ہیں۔

 

Teri Yaaden December Ki Shabo’n Jaisi,

Jo Aati Hain To Janaa Bhool Jaati Hain.

 

 

پھر اس سرد موسم میں، ذرہ نہ چین سے سوئیں گے۔

دسمبر پھر سے آیا ہے، پھر سے ملنے کو روئیں گے۔

 

Phir Is Sard Mausam Main, Zara Na Chain Se Soyen Ge,

December Phir Se Aaya Hai, Phir Se Mil Ke Royen Ge.

 

 

کبھی چھا گئی یونہی روزو شب،

کبھی شور ہے کبھی چپ سی ہیں۔

 

Kabhi Chaa Gayi Yunhi Roz-O-Shab,

Kabhi Shor Hai, Kabhi Chup Si Hain,

 

 

 

کتنی چاہت سے لکھا ہے تمہارا نام دیواروں پر۔

زیدؔ آج بارش نے چوم چھوم کے مٹا دیا۔

 

Kitni Chahat Se Likha Tha Tumhara Naam Dewaron Pe,

Zaid Aaj Barish Ne Use Choom Choom Ke Mita Diya.

 

 

پہلی بارش ہوتی تھی تو یاد آتے تھے۔

اب جب یاد آتے ہو تو بارش ہوتی ہے۔

 

Pehle Barish Hoti Thi To Yaad Aate The,

Ab Jb Yaad Aate Ho To Barish Hoti Hai.

 

 

لوٹ آئی ہیں دیکھو۔ بارشیں پھر سے یہاں ،وہاں۔

اک تم کو ہی لوٹ کے آنے کی فرصت نہیں ملی۔

 

Laut Aayi Hain Dekho Barishen Phir Se Yahan Wahan,

Ik Tum Ko Hi Laut Ke Aane Ki Fursat Nahi Mili.

 

 

مجھے مار ہی نہ ڈالے یہ بادلوں کی سازش،

یہ جب سے برس رہی ہیں، تم یاد آرہے ہو۔

 

Mujhe Maar Hi Na Dale Yeh Badalon Ki Sazish,

Yeh Jab Sse Baras Rahi Hain! Tum Yaad Aarahe Ho.

 

اُٹھانے کو دل چاہے تیرا ہر ناز بارش میں،

کہ بھاتا نہیں کوئی ،مجھ کو ناراض بارش میں۔

 

Uthane Ko Dil Chahe Tera Har Naaz Barish Me,

Keh Bhata Nahi Koi Naraaz Mujhe Ko Barish Me.

 

تمہاری یاد کی برسات جب برستی ہے۔

میں ٹوٹ جاتا ہوں کچے سے جھونپڑے کی طرح۔

 

Tumhari Yaad Ki Barsaat Jab Barasti Hai,

Mein Toot Jata Hon Kache Se Jhonpray Ki Tarah.

 

اس بارش سے کہ دو میرے آنگن میں نہ برسے۔

اُسے دیکھ کر کوئی شدت سے یاد آتا ہے۔

Is Barish Se Keh Do Mere Aangan Mein Na Barse,

Use Dekh Kar Koi Shiddat Se Yaad Aata Hai.

 

بارش کی بوندوں میں جھلکتی ہے تصویر تیری

آج پھر بھیگ بیٹھیں ہیں تمہیں پانے کی چاہت میں۔

 

Barish Ki Boondo Me Jhalkti He Tasveer Teri,

Aaj Phir Bheeg Bethen Hen Tumhe Paane Ki Chahat Me.

 

 

میرا شہر تو بارشوں کا گھر ٹھہرا،

یہاں کی آنکھ ہو یا دل، بہت برستی ہیں۔

 

Mera Shahar To Baarishon Ka Ghar Thehra,

Yahan Ki Aankh Ho Ya Dil, Bahot Barasti Hain.

 

کبھی خاموش ہیں کبھی گم سی ہیں۔

یہ بارشیں بھی۔۔۔ تم سی ہیں

 

Kabhi Shokh Hein Kabhi Gumm Si Hein..

Ye Baarishen Bhi… Tum Si Hein.

 

کبھی جی بھر کہ برسنا، کبھی بُوند بُوند کے لئے ترسنا۔

اے بارش تیری عادتیں میرے یار جیسی ہیں۔

 

Kabhi Ji Bhar Ke Barasna, Kabhi Bond Bond Ke Liye Tarasna,

Ay Barish Teri Aadatein Mere Yaar Jesi Hain…!

 

Sad Baarish Shayari In Urdu/Hindi

 

میں تیرے ہجر کی برسات میں کب تک بھیگیں۔

ایسے موسم میں تو دیواروں بھی گر جاتی ہیں۔

 

Main Tere Hijar Ki Barsaat Main Kab Tak Bheegon …!!

Aise Mosam Main To Deewarain Bhi Gir Jati Hain.

 

رہنے دو اب کہ تم بھی مجھے پڑھ نہ سکو گے۔

برسات میں کاغذ کی طرح بھیگ گیا ہوں۔

 

Rehne Do Ab Ke Tum Bhi Mujhey Parh Na Sako Ge

Barsaat Mein Kaaghaz Ki Tarah Bheeg Gaya Hon,

 

بارشیں ہو ہی جاتی ہیں میرے شہر میں۔

فراز ،کبھی بادلوں سے تو کبھی آنکھوں سے۔

 

Baarishain Ho Hi Jaati Hain Mere Shaher Mein,

Faraz Kabhi Badalon Se To Kabhi Aankho Se.

 

بد نصیبی کا میں قائل تو نہیں ہوں۔

لیکن میں نے برسات میں جلتے ہوئے گھر دیکھے ہیں ۔

 

Bad-Naseebi Ka Main Qaa’il To Nahin Hoon,

Lekin Main Ne Barsaat Mein Jalte Hue Ghar Dekhe Hain

 

میرے حصے کی زمین بنجر تھی، میں واقف نہ تھا۔

بے سبب الزام میں دیتا رہا برسات کو۔

 

Mere Hisse Ki Zameen Banjar Thi, Main Waaqif Na Tha,

Be-Sabab Ilzaam Main Detaa Rahaa Barsaat Ko.

 

برسات میں دیوار و در  کی ساری تحریریں مٹیں۔

مٹاتا نہیں دھویا بہت تقدیر کا لکھا ہوا۔۔۔

 

Barsaat Mein Deewaar-O-Dar Ki Saari Tehreeren Mitin,

Mitata Nahin Dhoyaa Bahut Taqdeer Ka Likha Huwaa.

 

روتا آسمان ، مایوس پرندے اور تیری یادوں کے سلسلے۔

اُف یہ بارش کبھی تنہا کیوں نہیں آتی۔۔۔

 

Rota Aasman, Mayoos Parinde Or Teri Yadon Ke Silsily,

Uff! Ye Barish Kabhi Tanha Kyun Nahi Aati…!

 

اُسے  کہنا کہ اپنی قسمت پہ ناز کرنا اچھا نہیں ہوتا۔

ہم نے بارش میں  بھی جلتے ہوئے گھر دیکھے۔۔۔

 

Osay Kehna Keh Apni Kismat Pa Naaz Karna Acha Nahi Huta,

Hum Nay Barish Ma Bhi Jaltay Huwy Ghar Dakhay Han.

 

مجھے مار ہی نہ ڈالے ان بادلوں کی سازش،

جب سے برس رہے ہیں تم یاد آرہے ہو۔

 

Mojhe Maar He Na Dalay En Badloon Ki Sazish,

Jab Sy Baras Rahy Han Tum Yaad Aa Rahy Ho.

 

خود کو اتنا بھی نہ بچایا  کر۔

بارشیں ہوا کرے تو بھیگ جایا کر۔

 

Khud Ko Itna Bhi Na Bachaya Kr,

Barisen Hua Kare To Bheeg Jaya Kar.

 

جب بھی ہوگی پہلی بارش ، تم کو سامنے پائیں گے۔

وہ بوندوں سے بھرا چہرہ تمہارا ، ہم دیکھ پائیں گے۔

 

Jab Bhi Hogi Pahli Barish, Tumko Samne Payenge,

Wo Boondo Se Bhara Chehra Tumhara Hum Dekh To Payenge.

 

مجبوریاں اوڈھ کہ نکلتا ہوں گھر سے۔

ورنہ شوق تو آج بھی بارشوں میں بھیگنے کا۔

 

Majbooriyan Odh Ke Niklta Hun Ghar Se Aajkal,

Warna Shauk To Aaj Bhi Hai Barishon Me Bheegne Ka.

 

 

 

تمہیں بارشں پسند ہے، مجھے بارش میں تم۔

تمہیں ہنسنا پسند ہے مجھے ہنستے ہوئے تم۔

Tumhe Barish Pasand Hai Mujhe Barish Me Tum,

Tumhe Hansna Pasand Hai Mujhe Hanste Hue Tum.

 

کہیں پھسل نہ جاؤ ذرا سنبھال کہ چلنا۔

موسم بارش کا بھی ہے اور محبت کا بھی۔

 

Kahin Phisal Na Jao Zara Sambhal Ke Chalna,

Mausam Barish Ka Bhi Hai Aur Mohabbat Ka Bhi.

 

بارشوں میں چلنے سے اک بات یاد آتی ہے۔

پھسلنے کہ ڈر سے وہ میرا ہاتھ تھام لیتا تھا۔

 

Barishon Mein Chalne Se Ek Baat Yaad Aati Hai,

Phisalne Ke Dar Se Wo Mera Hath Thaam Leta Tha.

 

پوچھتے تھے نا کتنا پیار ہے تمہیں۔

لو اب گن لو ۔۔۔بارش کی یہ بوندیں۔

 

Poochhte The Na Kitna Pyar Hai Tumhe Humse,

Lo Ab Gin Lo... Barish Ki Ye Boonden.

 

عجب لطف کا منظر دیکھتا رہتا ہوں بارش میں۔

بدن جلتا ہے اور میں بھیگتا رہتا ہوں بارش میں۔

 

Ajab Lutf Ka Manzar Dekhta Rahta Hun Barish Mein,

Badan Jalta Hai Aur Main Bheegta Rahta Hun Barish Mein.

 

بارش کی بوندوں میں جھلکتی ہے تصویر اُنکی۔

اور ہم اُن سے ملنے کی چاہت میں بھیگ جاتے ہیں۔

 

Barish Ki Boondo Me Jhalakti Hai Tashveer Unki,

Aur Hum Unse Milne Ki Chahat Me Bheeg Jaate Hain.

 

Zara Thehro Barish Thamm Jaye To Phir Chale Jana,

Ksis Ka Tujh Ko Chu Lena Mujhe Achha Nahi Lagta,

 

ذرا ٹھرو بارش تھم جائے تو پھر چلے جانا،

کسی کا تجھ کو چھو لینا مجھے اچھا نہیں لگتا۔

 

Barish Shayari SMS Status In Urdu Hindi

 

 

بارش کی طرح تجھ پہ برستی رہے خوشیاں۔

ہر بوند تیرے دل سے ہر غم کو مٹا دے۔

 

Baarish Ki Tarah Tujh Pe Barasti Rahe Khushiyaa,

Har Boond Tere Dil Se Har Gham Ko Mitade.

 

جسے بارش کہ پانی میں بہاکر مسکراتے تھے۔

مجھے کاغذ کی وہ کشتی ذرا پھر سے بنا دے۔

 

Jise Baarish Ke Paani Me Bahakar Muskuraate The,

Mujhe Kagaz Ki Wo Kashti Zara Phr Se Bana Dein.

 

 

 

بھلا بارش سے کیا سیراب ہوگا۔

تمہارے وصل کا پیارا دسمبر۔

 

Bhala Baarsih Se Kiya Seraab Hoga,

Tumhare Wasal Ka Piyaasa December.

 

کچے مکان جتنے تھے بارش میں بہ گئے۔

ورنہ جو میرا دکھ تھا وہ دکھ عمر بھر کا تھا۔

 

Kacche Makan Jitne The Baarish Me Bah Gaye,

Warna Ju Mera Dukh Tha Wo Dukh Umar Bhar Ka Tha.

 

اتنی سلیقے سے تم یاد آتے ہو،

جیسے بارش ہو وقفے وقفے سے۔

 

Itne Saleeqe Se Tum Yaad Aate Hu,

Jaise Baarish Hu Waqfe Waqfe Se.

 

مجھے کاغذ کی کشتی بٹھا کر،

وہ خود بارش کا پانی ہو گیا۔

 

Mujhey Kagaz Ki Kashti Bithha Kar,

Wo Khud Barish Ka Paani Ho Gaya.

 

میری آنکھوں سے تیرے ذکر کی تیز بارش ھوں۔

میں ہوں پتھر مجھے انسان بنا دے مولا۔۔۔

 

Meri Aankho Se Tere Zikar Ki Tez Baarish Hun,

Mai Hun Pathar Mujhe Insaan Banade Maula,

 

بس بھی کر، ارے بادل، غلطی کی تجھے۔

اپنی غمِ داستاں جو سنا دی۔

 

Bas Bhi Kar, Are Badal, Galti Ki Tujhe,

Apni Ghame Daastan Jo Suna Di.

 

بارش ہوئی تو گھر کے دریچے سے لگ کر،

چپ چاپ سوگوار تجھے سوچتے ہوئے۔

 

Barish Hui Tu Ghar Ke Dareeche Se Lag Ker,

Chup Chaap So Gawar Tujhe Soochte Rahe.

 

بارش جب بھی آئی ہے۔

پُرانے درد لائی ہے۔

 

Baarish Jab Bhi Aayi Hai,

Puraane Dard Laayi Hai.

 

ہمیں کیا معلوم تھا کہ،

یہ موسم یوں رو پڑیگا

 

Hame Kiya Malum Tha Ke,

Ye Mausam Yun Ro Pade Ga.

 

اک بیمار پرندے کی طرح آفتابؔ

مجھ کو بارش سے بھی اب نفرت ہے۔

 

Ek Beemar Parinde Ki Tarah Aaftaab,

Mujh Ko Baarish Se Bhi Ab Nafrat Hai.

 

ہم سے پوچھو مزاج بارش کا،

ہم کچے مکان والے ہیں۔۔۔

 

Hum Se Pocho Mizaaj Barish Ka,

Hum Jo Kacche Makan Wale Hen.

 

جس طرح ٹوٹ کہ گرتی ہے زمین پہ بارش

اس طرح خود کو تیری ذات پہ مرتے دیکھا۔

 

Jis Tarah Toot Ke Girti Hai Zameen Par Baarish,

Is Tarah Khud Ko Teri Zaat Pe Marte Dekha.

 

یہ بارش کا موسم یہ ٹھنڈا سماء

یہ بھی کوئی وقت ہے ھم سے دور رہنے کا۔

 

Ye Baarish Ka Mausam Ye Thanda Samaa,

Ye Bhi Koi Waqat Hai Hum Se Door Rahne Ka.

 

رنگ برسات نے بھرے کچھ تو۔

زخم دل کے ہوئے ہرے کچھ تو۔

 

Rang Barsaat Ne Bhare Kuch Tu,

Zakham Dil Ke Hue Hare Kuch Tu.

 

موسم جو تھوڑا سرد ہُوا،

پھر وہی پُرانا درد ہُوا۔

 

Mausam Jo Thoda Sard Hua,

Phr Wahi Purana Dard Hua.

 

رو پڑا آسمان بھی آج میری وفا دیکھ کر۔

دیکھ بات تیری بے وفائی کی بادلون تک جا پہنچی۔

 

Roo Pada Aasman Bhi Aaj Meri Wafa Dekh Kar,

Dekh Baat Teri Be Wafai Ki Baadalo Tak Jaa Pahunchi.

 

اندر یادیں سوکھ رہی ہیں۔

باہر منظر بھیگ رہے ہیں۔

 

Ander Yaadein Sookh Rahi Hai,

Bahar Manzar Bheeg Rahe Hai.

 

 

درو دیوار پہ شکلیں سی بنانے آئی۔

پھر یہ بارش میری تنہائی چرانے آئی۔

 

Dar-O-Deewar Pe Shaklein Se Banane Aayi,

Phir Ye Baarish Meri Tanhai Churane Aayi.

 

برس کچھ اور اے آوارہ دل کہ

دل کا صحرا پیاسا رہ گیا ہے۔

 

Baras Kuch Aur Aye Awara Dil Ke,

Dil Ka Saharا Piyaasa Rah Gaya Hai.

 

تیز بارش میں کبھی سرد ہواؤں میں رہا۔

اک تیرا زکرہے میری صداؤں میں رہا۔

 

Tez Barish Me Kabhi Sard Hawao Me Raha,

Ek Tera Zikar He Meri Sadaon Me Raha.

 

بوندیں گری تو آنکھ میں آنسو بھی آگئے۔

بارش کا اسکی یاد سے رشتہ ضرور ہے۔

 

Boonde Gire Tu Aankh Me Aansoo Bhi Agaye,

Barish Ka Uski Yaad Se Rishta Zaroor Hai…

 

رو رہا تھا کسی جلتی ہوئی خواہش کہ ساتھ۔

خیر مقدّم کرنے آئے دھوپ بھی بارش کے ساتھ۔

 

Roo Raha Tha Kisi Jalti Hui Khawahish Ke Sath,

Khair Muqaddam Karne Aayi Dhoop Bhi Barish Ke Sath.

 

کچے مکان جتنے تھے بارش میں بہہ گئے

ورنہ جو میرا دکھ تھا وہ دکھ عمر بھر کا تھا۔۔۔

 

Kache Makaan Jitne The Baarish Me Beh Gye,

Warna Jo Mera Dukh Tha Wo Umar Bhar Ka Tha.

 

جس طرح ٹوٹ کے گرتی ہے زمیں پر بارش

اس طرح خود کو تیری ذات پہ مرتے دیکھا

 

Jis Trah Toot Ke Girti He Baarish Zameen Per,

Isi Trah Khud Ko Teri Zaat Pe Marte Dekha.

 

کل رات بر ستی رہی سا ون کی گھٹا بھی

اور ہم بھی تیری یاد میں دل کھو ل کے روئے۔

 

Kal Raat Barsti Rahi Savan Ki Ghata Bhi,

Aur Hum Bhi Teri Yaad Me Dil Khol Ke Rooye.

 

برسات تھم چکی ہے مگر ہر شجر کے پاس

اتنا تو ہے کہ آپ کا دامن بھگو سکے۔۔۔

 

Barsat Tham Chukki Thi Magar Her Shajer Ke Paas,

Itna To He Ke Aap Ka Daaman Bhigo Sake.

 

جسے بارش کے پانی میں بہا کر مسکراتے تھے

مجھے کاغذ کی وہ کشتی ذرا پھر سے بنا دینا

 

Jise Baarish Ke Paani Me Baha Ker Muskrate The,

Mujhe Kaagiz Ki Who Kashti Zara Phir Se Bana Dena.

 

تپش اور بڑھ گئی ہے ان چند بوندوں کے بعد

کا لے سیّاہ بادل نے بھی یوں ہی بہلایا مجھے

 

Tapash Aur Barh Gye He In Chandd Boondo Ke Baad,

Kaale Siyaah Baadal Ne Bhi Youn Hi Behlaya He Mujhe.

 

اس نے بارش میں بھی کھڑکی کھول کے دیکھا نہیں

بھیگنے والوں کو کل کیا کیا پریشانی ہو ئی۔۔۔

 

Us Ne Baarish Me Bhi Khidki Khol Ke Dekha Nahi,

Bheegne Walon Ko Kal Kiya Preshani Hoi…

 

ہم تو آ ج بھی تمہیں اسی طرح چا ہتے ہیں انمول

جیسے سُو کھا ہوا درخت با رش کا طلبگا ر ہو تا ہے۔

 

Hum To Aaj Bhi Tumhe Usi Trah Chahte Hen Anmol,

Jese Sookha Houa Darkhat Barish Ka Talabgaar Hota He.

 

پا نی میں عکس دیکھ کر خو ش ہو رہی تھی میں

کہ پتھر کسی نے پھینک کر منظر بدل دیا۔

Paani Me Akas Dekh Ker Khush Ho Rhi Thi Me,

Keh Pather Ksi Ne Phenk Ker Manzir Badal Diya.

 

ہنس ہنس کے سُنا تی ہے جہا ں بھر کے فسانے

پُو چھوں تیرے با رے میں تو رو دیتی ہے بارش۔

 

Hans Hans Ke Sunati He Jahan Bhar Ke Afasane,

Pooshon Tere Bare Me To Ro Deti He Baarish.

 

نم ہیں پلکیں تیری اے موجِ ہوا رات کے ساتھ۔

کیا تجھے بھی کوئی یاد آتا ہے برسات کے ساتھ۔

 

Nam Hai Palkein Teri Ae Moj-E Hawa Raat Ke Saath,

Kya Tujhe Bhi Koi Yad Aata Hai Barsat Ke Sath.

 

No comments

Please comment below in case of any question.